Breaking News
Home / Blog / The Pasmanda Movement Relevance Amidst Deepening Caste Discrimination Among Indian Muslims

The Pasmanda Movement Relevance Amidst Deepening Caste Discrimination Among Indian Muslims

پسماندہ تحریک: ہندوستانی مسلمانوں میں ذات پات کی امتیاز کے درمیان مطابقت

آج کے ہندوستان میں، پسماندہ تحریک ایک معتبر قوت کے طور پر ظاہر ہوئی ہے جو پسماندہ مسلم معاشرے کے حقوق اور ان کی شناخت کی وکالت کرتی ہے۔ اسلام کی مساوات کی تعلیمات کے باوجود، ہندوستانی مسلمانوں میں ذات پات کی بنیاد پر امتیاز برقرار ہے، جو پسماندہ مسلمانوں کو درپیش حقیقتوں کو ظاہر کرتا ہے۔ یہ مضمون ذات پات کی بنیاد پر امتیاز کی عمیق کی روشنی میں پسماندہ تحریک کی بڑھتی ہوئی مطابقت کو دریافت کرتا ہے اور حالیہ واقعات پر روشنی ڈالتا ہے جو اس مقصد کی عجلت پر روشنی ڈالتے ہیں۔

فارسی سے ماخوذ لفظ “پاسماندہ” کا مطلب ہے “وہ لوگ جو پیچھے رہ گئے ہیں۔” یہ اجتماعی طور پر دلت، پسماندہ اور قبائلی مسلمانوں کی طرف اشارہ کرتا ہے جنہیں مسلم معاشرے کے اندر نظامی امتیاز کا سامنا ہے۔ تاریخی طور پر، ہندوستانی مسلمانوں کو درجہ بندی کے زمروں میں تقسیم کیا گیا ہے: اشرف (اعلیٰ یا اعلیٰ ذات کے مسلمان)، اجلاف (پسماندہ مسلمان)، اور ارزال (دلت مسلمان)۔ پسماندہ تحریک اجلاف اور ارزال مسلمانوں کی ترقی کی کوشش کرتی ہے جو معاشرے کے حاشیے پر چلے گئے ہیں۔

ہندوستانی مسلمانوں میں ذات پات کی بنیاد پر امتیازی سلوک محض ماضی کی یادگار نہیں ہے بلکہ ایک اہم مسئلہ ہے جو سماجی اخراج سے لے کر پرتشدد جرائم تک مختلف شکلوں میں ظاہر ہوتا ہے۔ میرٹھ، اتر پردیش میں حال ہی میں غیرت کے نام پر قتل کی ایک عبرتناک مثال ہے، جس میں ملوث دونوں فریق مسلمان تھے۔ اس معاملے میں، ایک 21 سالہ خاتون کو اس کے ماموں اور خالہ نے بے دردی سے قتل کر دیا تھا اور اس کی لاش کو اس لیے جلا دیا تھا کیونکہ اس کا تعلق دوسری ذات کے آدمی سے تھا۔ یہ ہولناک واقعہ مسلم معاشرے کے اندر ذات پات کے تعصبات کے مہلک نتائج کو واضح کرتا ہے۔ امتیازی سلوک کی دیگر مثالوں میں مساجد میں علیحدگی، بعض مذہبی رسومات کی راہ میں رکاوٹیں اور اعلیٰ ذات کے مسلمانوں کی طرف سے توہین آمیز سلوک شامل ہیں۔ یہ وسیع تعصبات پسماندہ مسلمانوں کی پسماندگی کو برقرار رکھتے ہیں اور پسماندہ تحریک کی ضرورت پر روشنی ڈالتے ہیں۔ پسماندہ مسلمان اکثر اپنے آپ کو سب سے نچلے سماجی و اقتصادی طبقے میں پائے جاتے ہیں، جو معمولی، کم تنخواہ والی ملازمتوں میں مصروف ہیں۔ انہیں معیاری تعلیم، روزگار کے مواقع اور صحت کی دیکھ بھال تک رسائی میں نمایاں رکاوٹوں کا سامنا ہے۔ پسماندہ مسلمانوں کے لیے سیاسی پسماندگی ایک اور اہم چیلنج ہے۔ تاریخی طور پر، سیاسی نمائندگی نے اشرف مسلمانوں کی حمایت کی ہے، پسماندہ مسلمانوں کو پالیسی سازی میں کم سے کم اثر و رسوخ کے ساتھ چھوڑ دیا ہے۔ پسماندہ تحریک کا مقصد تعلیمی اداروں اور سرکاری ملازمتوں میں زیادہ سیاسی نمائندگی اور ریزرویشن کا مطالبہ کرکے اس عدم توازن کو دور کرنا ہے۔

پسماندہ تحریک معاصر ہندوستان میں ایک نازک موڑ پر قائم ہے، جو لاکھوں پسماندہ مسلمانوں کے لیے وقار، مساوات اور انصاف کی جنگ کی علامت ہے۔ چونکہ ذات پات کی بنیاد پر امتیازی سلوک کے واقعات سامنے آتے رہتے ہیں، تحریک کی مطابقت اور عجلت ناقابل تردید ہے۔ وسیع تر ہندوستانی سماج بشمول پالیسی سازوں، معاشرے کے قائدین اور سرگرم کارکنوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ پسماندہ مسلمانوں کو درپیش ناانصافیوں کو پہچانیں اور ان کا ازالہ کریں۔ صرف اجتماعی کوششوں اور حقیقی سماجی اصلاح کے عزم کے ذریعے ہی ہم نسلی تعصبات کو ختم کرنے اور سب کے لیے ایک زیادہ جامع اور مساوی مستقبل کی تعمیر کی امید کر سکتے ہیں۔

انشا وارثی،

فرانکوفون اور جرنلزم اسٹڈیز،

جامعہ ملیہ اسلامیہ

*****

Check Also

Bridging Cultures Through Yoga: Egypt and Beyond

In a resplendent display of cultural exchange and global camaraderie, the Indian Council for Cultural …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *